Ahmad Faraz 2 Line Poetry in Urdu – Urdu Shayari

Ahmad Faraz 2 Line Poetry in Urdu

Suna Hai Barish Main Hr Duwa qbol Hoti Hy

Murshid!Agr Ijazat Ho Tou Duwa Main Tumhain Mang Lo

-::-

سنا ہے بارش میں ہر دعا قبول ہوتی ہے

مرشد ! اگر اِجازَت ہو تو دعا میں تمہیں مانگ لو

—————–

Muje Skoon Chahiye

Mtlb Sirf Tum

-::-

مجھے سکون چاہیے

مطلب صرف تم

——————-

Kie Rango Sy Yaha Chahre Bana Lety Hain Loog

Ik Ko Smgo Tou Dosra charha Lety Hain Loog

-::-

کی رنگو سے یہاں چہرے بنا لیتے ہیں لوگ

اک کو سمجو تو دوسرا چڑھا لیتے ہیں لوگ

——————-

Tere Waady Agr Wafa Hoty

Jnab!Mjaze Hi Sahi Hm Tere Khuda Hoty

-::-

تیرے وعدے اگر وفا ہوتے

جناب ! مجازی ہی سہی ہم تیرے خدا ہوتے

——————

Muje Tum Sy Shikayt Nhi Lakin

Murshid!Mgr Yaad A ta Hy Tera Muj Sy Muhabbat Krna

-::-

مجھے تم سے شکایت نہیں لیکن

مرشد ! مگر یاد آ تا ہے تیرا مجھ سے محبت کرنا

————-

Ro Para Wo Fakir Bhi Mere Hatho Ki Lakiro Ko Daikh Kr

Aur Kahta Hai Tuje Moot Nhi Kisi Ki Yaad maaray Gi

-::-

رو پڑا وہ فقیر بھی میرے ہاتھوں کی لکیروں کو دیکھ کر

اور کہتا ہے تجھے موت نہیں کسی کی یاد مارے گی

———————

Adain Katil Hoti Hain Ankhain Nshely Hoti Hain

Muhabbat Main Aksr Hont Sukhay Hoty Hain Ankhain Gili Hote Hain

-::-

ادائیں قاتل ہوتی ہیں آنکھیں نشیلی ہوتی ہیں

محبت میں اکثر ہونٹ سوکھے ہوتے ہیں آنکھیں گیلی ہوتے ہیں

—————-

Khud Ky Samny Kisi Aur Ko Galy Lagatey Dakha Hai

Han Main Ny Apni Muhabbat Ko Jaty Daikha Hy

-::-

خود کے سامنے کسی اور کو گلے لگاتے دیکھا ہے

ہاں میں نے اپنی محبت کو جاتے دیکھا ہے

—————–

Ro Ro Ky Sunao Ga Sb Ko Haal Le Dil

Wada Raha Main Tera Naam Lo Ga

-::-

رو رو کے سناؤ گا سب کو حال لے دِل

وعدہ رہا میں تیرا نام لو گا

—————-

Main Na Chop ky Sy Toota Tha

Agr Girta Tou Shor Ho Jata

-::-

میں نا چوپ کے سے ٹوٹا تھا

اگر گرتا تو شور ہو جاتا

——————–

Wo Muje bholny Ki Koshish Bar Bar Kr Rhi Ho Gi

Meri Hechkio Sy Lgta Hy Wo Muje Yaad Kr Rhi Ho Gi

-::-

وہ مجھے بھولنے کی کوشش بار بار کر رہی ہو گی

میری حیچکیو سے لگتا ہے وہ مجھے یاد کر رہی ہو گی

——————

Plko Ny Boht Smjaya Mgr yeh Ankh nhi Mani

Din Tou Hans Kr Guzara Hm Ny Mgr Raat Nhi Mani

-::-

پلکو نے بہت سمجایا مگر یہ آنکھ نہیں مانی

دن تو ہنس کر گزارا ہم نے مگر رات نہیں مانی

——————

Agr Lrtay Tm Sy Hain

Tou Marty Bhi Tm Pr Hain

-::-

اگر لرتے تم سے ہیں

تو مرتے بھی تم پر ہیں

———————–

Murshid!Saja Tou Rakhi Hy Chahry Pay Dikha way Ki Hnsi

Hy Murshid!Warna Hamara Dil Kali Seyah Raato Ka Shikar hy

-::-

مرشد ! سجا تو رکھی ہے چہرے پے دکھا وے کی ہنسی

ہے مرشد ! ورنہ ہمارا دِل کالی سیاہ راتوں کا شکار ہے

——————

Kh Ab Wapsi Ka Irada Kijey

Murshid!kh Yado Sy Ab Guzara Nhi Hota

-::-

کہ اب واپسی کا اِرادَہ کیجئیے

مرشد ! کہ یادو سے اب گزارا نہیں ہوتا

——————

Kh Tou Itna Kr Hi Nhi Skta Tha Muje

Murshid!Jitna Hudd Ko Barbad Kya Main Ny

-::-

کہ تو اتنا کر ہی نہیں سکتا تھا مجھے

مرشد ! جتنا حود کو برباد کیا میں نے

—————

Murshid!Lhga Yr Main Zehr Bichu jaisa

Murshid!Wo Muje Ap Tou Khte Hy Mgr tou ki Trha

-::-

مرشد ! لحجا یار میں زہر بچھو جیسا

مرشد ! وہ مجھے آپ تو کہتی ہے مگر تو کی طرح

——————

Roz Khta Ho Bhol Jao Ussy

Murshid!Roz Yehi Baat Bhol Jata Ho

-::-

روز کہتا ہو بھول جاؤ اُسے

مرشد ! روز یہی بات بھول جاتا ہو

——————–

Phir Kisi Ky Sath Nhi Jrtey

Murshid!jo Andr Sy Tot Jaty Hain

-::-

پِھر کسی کے ساتھ نہیں جرتے

مرشد ! جو اندر سے ٹوٹ جاتے ہیں

——————-

Kh Ki Muhabbat Tou Syast Ka Chln Chorr Diya

Murshid!Agr Hm Ishq na Krty Tou Hkomt Krty

-::-

کہ کی محبت تو سیاست کا چلن چھوڑ دیا

مرشد ! اگر ہم عشق نا کرتے تو حكومت کرتے

———————

Murshid!Kbhi Paas Baitho Tou Bataain Tum Ko Kh Dard Kya Hai

Hye Murshid!Yu dour Sy Pocho Gy Tou Hiriyt Hi Bataain Gy

-::-

مرشد ! کبھی پاس بیٹھو تو بتائیں تم کو کہ درد کیا ہے

ہائے مرشد ! یو دوڑ سے پوچھو گے تو حیریت ہی بتائیں گے

————————

Bht Maan tha jin pr

Murshid!Bray bay iman Nikly

-::-

بہت مان تھا جن پر

مرشد ! بڑے بے ایمان نکلے

—————-

Murshid!Yh Mt Soch Kh Tere Kabil nhi Hain Hum

Hye Murshid!Trp Rahe Hain Wo Jinhain Hasil Nhi Hain Hm

-::-

مرشد ! یہ مت سوچ کہ تیرے قابل نہیں ہیں ہم

ہائے مرشد ! ٹرپ رہے ہیں وہ جنہیں حاصل نہیں ہیں ہم

—————

Murshid!Loog Logo Ko Maar Daity Hain

Hye Murshid!Aap Tou Phir Khwabo Ki Baat Krty Ho

-::-

مرشد ! لوگ لوگوں کو مار دیتے ہیں

ہائے مرشد ! آپ تو پِھر خوابوں کی بات کرتے ہو

——————

Murshid!yu Tou Hr Sham Umed o Peh Guzr Jati Hy

Hye Murshid!Aaj Koi Tou Baat Hai Jo Umeed o Peh Rona Aya

-::-

مرشد ! یو تو ہر شام اُومید و پہ گزر جاتی ہے

ہائے مرشد ! آج کوئی تو بات ہے جو امید و پہ رونا آیا

——————

Sari Raat Mn Usay Chony Sy Drta Raha Main Bay Chain BayBs Bs Krwtain Bdalta raha

Aur Haath tou Mera Hi Tha Us Ky Haath Main Bs Zikr Kisi Aur Ka chlta Raha

-::-

ساری رات من اسے چھونے سے ڈرتا رہا میں بے چین بےبس بس کروتیں بدلتا رہا

اور ہاتھ تو میرا ہی تھا اس کے ہاتھ میں بس ذکر کسی اور کا چلتا رہا

———————–

Kya kaha Murshid Tera jrm Batao

Murshid!Daikh Na Hm Muskra Nhi Patay

-::-

کیا کہا مرشد تیرا جرم بتاؤ

مرشد ! دیکھ نا ہم مسکرا نہیں پاتے

——————–

Murshid!Wo Jo Khta Tha Kuch Nhi Hota

Ab Wo Rota Hai Aur Chup Nhi Hota

-::-

مرشد ! وہ جو کہتا تھا کچھ نہیں ہوتا

اب وہ روتا ہے اور چُپ نہیں ہوتا

———————

Murshid!Kisi Ki zaat Sy Koi Gila Nhi Apna Naseeb Apni Kharabi Sy Mar Gaya

Murshid!Jis Ky Haath Main Hr Aik cheese Hy Shayd Wohi Hmare Saath Haath Kr Gaya

-::-

مرشد ! کسی کی ذات سے کوئی گلہ نہیں اپنا نصیب اپنی خرابی سے مر گیا

مرشد ! جس کے ہاتھ میں ہر ایک چیز ہے شاید وہی ہماری ساتھ ہاتھ کر گیا

—————-

Jaisy Chlata ho Waisy nhi Chalta Kaisy Batao yara Aisay Nhi Chalta

Aur Tou Hood Ko Mera Saya Batata Hye Murshid Phir Kiu Tou Mere Jaisa Nhi Chalta

-::-

جیسے چلاتا ہو ویسے نہیں چلتا کیسے بتاؤ یارا ایسے نہیں چلتا

اور تو ہود کو میرا سایہ بتاتا ہے مرشد پِھر کیوں تو میرے جیسا نہیں چلتا

——————-

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *