Ahmad Faraz Poetry Images for Girlfriend in Urdu – Urdu Shayari

Ahmad Faraz Poetry Images for Girlfriend in Urdu

Kh Yun Tou Kiyamat Hai Hr Aik Ada Un ki

Murshid!Lakin Dehmay Say Jo Muskuratay hain Cha Jatay Hain

-::-

کہ یوں تو قیامت ہے ہر ایک ادا ان کی

مرشد ! لیکن دیحمے سے جو مسکراتے ہیں چھا جاتے ہیں

———————–

Kuch Pal Muje Apni Baaho Main Sola Lay Na

Murshid!Ankh Khulay Tou Utha Daina Na Khulay Tou Dafna Daina

-::-

کچھ پل مجھے اپنی باھو میں سولہ لے نا

مرشد ! آنکھ کھلے تو اٹھا دینا نا کھلے تو دفنا دینا

——————

Kh Kash koi Aisa Ho Jo Galay Laga Kr Kahay

Murshid!Roya Na Kr Tere Ronay say Muj Ko Bhi dard Hota Hay

-::-

کہ کاش کوئی ایسا ہو جو گلے لگا کر کہے

مرشد ! رویا نا کر تیرے رونے سے مجھ کو بھی درد ہوتا ہے

——————-

Kh Wla Kya Kashish Thi Mt Puchye Sahib

Muj Say Yh Dil Lar Pra Muje Yh Chahiye Muje Yh Chahiye

-::-

کہ ولا کیا کشش تھی مت پوچھے صاحب

مجھ سے یہ دِل لڑ پڑا مجھے یہ چاہیے مجھے یہ چاہیے

———————-

Murshid!Abhi Tou Badlay Hain

Murshid!Badlay Abhi Baki Hain

-::-

مرشد ! ابھی تو بدلے ہیں

مرشد ! بدلے ابھی باقی ہیں

—————-

Kh Murshid!Halaat Ny Mere ChehRy Ki Chamak Chheen Li

Murshid!Warna yun Dou Chaar Bras Main bhor ha Pay Nhi Atay

-::-

کہ مرشد ! حالات نے میرے چہرے کی چمک چھین لی

مرشد ! ورنہ یوں دو چار برس میں بھور ہا پے نہیں آتے

——————–

Bahir Ronkain Lagaay Baithay Hain

Murshid!Andar Sy Qbrstan Hain Hum

-::-

باہر رونکیں لگائے بیٹھے ہیں

مرشد ! اندر سے قبرستان ہیں ہم

——————

Murshid!Wo Kahti Rahi Tum Mere Ho

Murshid!Mgr main Sunna Chahta Tha Main Tumhari Ho

-::-

مرشد ! وہ کہتی رہی تم میرے ہو

مرشد ! مگر میں سننا چاہتا تھا میں تمہاری ہو

———————

Kh Murshid Pyar Sy Wo Muje Jaan Khta Tha

Hye Murshid!Wo Meri Jaan Lay Gaya Jaan Khtay Khtay

-::-

کہ مرشد پیار سے وہ مجھے جان کہتا تھا

ہائے مرشد ! وہ میری جان لے گیا جان کہتے کہتے

——————

Hm Jaisy baikar Loog

Hye Murshid!Rhoot Bhi Jain tou Koi Manany Nhi A ta

-::-

ہم جیسے بیکار لوگ

ہائے مرشد ! رحوت بھی جائیں تو کوئی منانے نہیں آ تا

—————–

Insan Khail Ny Ki Cheese Nhi Hoti Murshid

Mafi Galti Yu Ki Hoti hy Murshid dil Dukha ny Ki Nhi Hoti

-::-

انسان کھیل نے کی چیز نہیں ہوتی مرشد

معافی غلطی یو کی ہوتی ہے مرشد دِل دکھا نے کی نہیں ہوتی

———————

Murshid!Wo Jo Khtay Thy Tumhain Hum achay Sy Jantay Hain

Hye Murshid!Usy Ab Meri Takleef bhi Dikhai Nhi Daiti

-::-

مرشد ! وہ جو کہتے تھے تمہیں ہم اچھے سے جانتے ہیں

ہائے مرشد ! اسے اب میری تکلیف بھی دکھائی نہیں دیتی

—————–

Kh Kya Kaha Tum Ny Usny Muje Chhor Diya Hy

Sahab Apny Ilfaz Drost Kro Usny Muje Khi Ka Nhi Chora

-::-

کہ کیا کہا تم نے اسنے مجھے چھوڑ دیا ہے

صاحب اپنے الفاظ دروست کرو اسنے مجھے کہی کا نہیں چھوڑا

—————–

Wafa Kisay Khtay Ho Tum Yh Tou malom Nhi Muje Magr

Yun Achank Chhor jana Agr wafaDari Hy Tou Phir lanat Aisi wafa Pr

-::-

وفا کسے کہتے ہو تم یہ تو معلوم نہیں مجھے مگر

یوں اچانک چھوڑ جانا اگر وفا داری ہے تو پِھر لعنت ایسی وفا پر

———————-

Murshid!Mukmal Ujer Gy Hum

Hye Murshid!Kya Isi Kabil Thy Hum

-::-

مرشد ! مکمل اجڑ گے ہم

ہائے مرشد ! کیا اسی قابل تھے ہم

————————-

phir Khi Bhi Pannaah Nhi Milti

Jb Muhabbat Bay Pannaah Ho Jaye

-::-

پِھر کہی بھی پناہ نہیں ملتی

جب محبت بے پناہ ہو جائے

——————

Hum Ny Socha Tha Bataain Gay Sabhi Dard Tum Ko

Murshid!Tum Ny Tou Itna Bhi Nah Pocha Khamosh Kiun Kharay Ho

-::-

ہم نے سوچا تھا بتائیں گے سبھی درد تم کو

مرشد ! تم نے تو اتنا بھی نہ پوچھا خاموش کیوں کھرے ہو

———————-

Mashwara Chahtay Ho Bay Wafa Ko Bhol Ny Ka

Tanhai Main Baith Kr Lanat Kiya Kr

-::-

مشورہ چاہتے ہو بے وفا کو بھول نے کا

تنہائی میں بیٹھ کر لعنت کیا کر

——————

Raat Neat Ki Bay Wafao Pah Kuch Likhny Ki

Lanat Likhi Aur Phir Likhta Gaya Likhta Gaya

-::-

رات نیت کی بے وفاؤں پاہ کچھ لکھنے کی

لعنت لکھی اور پِھر لکھتا گیا لکھتا گیا

——————–

Murshid!App Bare Loog Hain App Pah Wfaain Khatam

Murshid!Hum Gareeb Loog Aksr Bay Wafa Hi Ginay Jatay Hain

-::-

مرشد ! آپ بڑے لوگ ہیں آپ پہ وفائیں ختم

مرشد ! ہم غریب لوگ اکثر بے وفا ہی گنے جاتے ہیں

—————–

Soog Mna nin Sy Qismt Nhi Bdla Krti

Hasil Nhi Kr Skte Tou Fatiha Prain

-::-

سوگ منا نین سے قسمت نہیں بدلا کرتی

حاصل نہیں کر سکتی تو فاتحہ پریں

——————-

Kon Krta hai Yaha Pyar Nbha Ny K Liye

Murshid dil tou Aik Khilona Hai Zmanay K liye

-::-

کون کرتا ہے یہاں پیار نبھا نے کے لیے

مرشد دِل تو ایک کھلونا ہے زمانے کے لیے

——————

Murshid!FrQ Tha Hum Dono Ki Muhabbat Main

Muje Usay Hi Thi Usay Muj Say Bhi Thi

-::-

مرشد ! فرق تھا ہم دونوں کی محبت میں

مجھے اسے ہی تھی اسے مجھ سے بھی تھی

——————-

Kh Inhain Jo Naaz Hai Khud Pah Nhi Wo Bay Waja Mohsin

Kh Jis ko Gm Ny Chaha Ho Wo Khud Ko Aam Kiu Smjhe

-::-

کہ انہیں جو ناز ہے خود پہ نہیں وہ بے وجہ محسن

کہ جس کو غم نے چاہا ہو وہ خود کو عام کیوں سمجھے

——————–

Ishq Zinda Bhi Chhor Daita Hai

Murshid!Main Tumhain Apni Msal Daita Ho

-::-

عشق زندہ بھی چھوڑ دیتا ہے

مرشد ! میں تمہیں اپنی مثال دیتا ہو

——————

Kh Bari Shifa Hai Tere Ishq Main

Hye Murshid!Jb Sy Howa hai Koi Dosra dard Nhi Mila

-::-

کہ بڑی شفاء ہے تیرے عشق میں

ہائے مرشد ! جب سے ہوا ہے کوئی دوسرا درد نہیں ملا

———————

Apny Barey Main Kbhi Socha Hi Nhi

Murshid!Loog Kafi Hain Hmain Sochnay K Liye

-::-

اپنے بارے میں کبھی سوچا ہی نہیں

مرشد ! لوگ کافی ہیں ہمیں سوچنے کے لیے

—————

Murshid!Muhabbat Aik Ahsas Hai

Jis Say Ho Jaye Wahi Khas Hai

-::-

مرشد ! محبت ایک احساس ہے

جس سے ہو جائے وہی خاص ہے

——————

Kh Kon Kahta Hai Muhabbat Ankho Main Hoti Hai

Murshid!Dil Tou Wo Bhi Lay Jate Hain Jo Nazrain Johka Kr Chalty Hain

-::-

کہ کون کہتا ہے محبت آنکھوں میں ہوتی ہے

مرشد ! دِل تو وہ بھی لے جاتے ہیں جو نظریں جوحکا کر چلتے ہیں

——————–

Kisi Ny Pocha Kh Zindagi Main Kya Kiya

Main Muskuraya Aur Bola Glat Logo Pah Bhrosa

-::-

کسی نے پوچھا کہ زندگی میں کیا کیا

میں مسکرایا اور بولا غلط لوگوں پاہ بھروسہ

———————-

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *