Ahmad Nadeem Qasmi Sad Urdu Poetry 2 Line – Urdu Shayari

Ahmad Nadeem Qasmi Sad Urdu Poetry 2 Line

Kh Mulaqatain Nhi Mumkin Hmain Ahsas Hai Lakin

Murshid!Bs Itna Yaad Rakhna Tumhain Hm Yaad Krty Hain

-::-

کہ ملاقاتیں نہیں ممکن ہمیں احساس ہے لیکن

مرشد ! بس اتنا یاد رکھنا تمہیں ہم یاد کرتے ہیں

——————-

Aap Ko Jo Mu Na Lagaya Hm Ny

Murshid!Aap Tou Bohtan Pay Utar Aye

-::-

آپ کو جو منہ نا لگایا ہم نے

مرشد ! آپ تو بہتان پے اُتَر آئے

——————

Kh Chahre Sy Kaha pata Chalta Hai

Murshid!Kon Apny Andr Kitna Drd Rakhta Hai

-::-

کہ چہرے سے کہا پتہ چلتا ہے

مرشد ! کون اپنے اندر کتنا درد رکھتا ہے

——————

Kh Woh Peer tha Daita Tha Bimaro Ko Ishq Ki Dawa

Murshid!Us Ky Gnazay Pay Pata Chala Kh Khod Wo Mara Tha Ishq Ka

-::-

کہ وہ پیر تھا دیتا تھا بیمارو کو عشق کی دوا

مرشد ! اس کے جناز اے پے پتہ چلا کہ خود وہ مارا تھا عشق کا

——————-

Yh Jo Tum Ishq Main Krty Ho Hisab Kitab

Murshid!Hum Jo Krnay Baithay Tumhain KHreed Lain Gy

-::-

یہ جو تم عشق میں کرتے ہو حساب کتاب

مرشد ! ہم جو کرنے بیٹھے تمہیں خرید لیں گے

——————

Kh Main Ny Khawab Main Moot Daikhi Hai

Murshid!Ronay Walo Main Tum Nhi Thay

-::-

کہ میں نے خواب میں موت دیکھی ہے

مرشد ! رونے والو میں تم نہیں تھے

—————

Boht Dour Chalay Gy Boht Dour Chalay

Murshid!Qreeb Atay Atay Kuch Loog

-::-

بہت دوڑ چلے گے بہت دوڑ چلے

مرشد ! قریب آتے آتے کچھ لوگ

—————–

Khudkoshi Ka Halal Triqh batao

Murshid!Kaho Tou Tsbe Sy Apna Gala Ghont Lon

-::-

خودکوشی کا حلال طریقہ بتاؤ

مرشد ! کہو تو تسبی سے اپنا گلا گھونٹ لوں

——————

Koi Tou Aisi Baat Kro Koi Tou Aisi Baat Kro

Murshid!Jis Sy Lagay Kh Tum Bs Mere Ho

-::-

کوئی تو ایسی بات کرو کوئی تو ایسی بات کرو

مرشد ! جس سے لگے کہ تم بس میرے ہو

—————–

Saaf Niyt Sy Mang Kr Tou Daikho

Murshid!Wo Rab Naseeb Sy Bhar Kr Ata Krta Hai

-::-

صاف نیت سے مانگ کر تو دیکھو

مرشد ! وہ رب نصیب سے بھر کر عطا کرتا ہے

——————

Unho Ny Bandh Liya Tere Baad Hamain

Murshid!Tere Hath main Rahtay Tou Kitna Acha Hota

-::-

انہوں نے باندھ لیا تیرے بعد ہمیں

مرشد ! تیرے ہاتھ میں رہتے تو کتنا اچھا ہوتا

——————-

Kh Bhaar Main Jae Yh Dunya Sari

Murshid!Hum Nhi Totnay Dein Gy Apni Yari

-::-

کہ بہار میں جائے یہ دنیا ساری

مرشد ! ہم نہیں ٹوٹنے دیں گے اپنی یاری

——————–

Murshid!Kya Khob Hi Hota Agr Dukh Rait Ky Hote

Murshid!Muthi Sy Gira Daity Pau Sy Ura Daity

-::-

مرشد ! کیا خوب ہی ہوتا اگر دکھ ریت کے ہوتے

مرشد ! مٹھی سے گرا دیتے پاؤ سے اڑا دیتے

——————

Wo Khud Aain Gy Mere Rastay Main

Murshid!Main Zindagi Ko Aisa Mor Dou Ga

-::-

وہ خود آئیں گے میرے رستے میں

مرشد ! میں زندگی کو ایسا مور دو گا

——————

Tum Mere Dil Ki Us Gali Main Rahty Ho

Murshid!Jaha Phla Ghar Khuda Ka Hai

-::-

تم میرے دِل کی اس گلی میں رہتے ہو

مرشد ! جہاں پھلا گھر خدا کا ہے

—————-

Murshid!Hamain qabro Main Nhi Ktabon Main Utaro

Hye Murshid!Hum Muhabbat Ky Maaray Howe Hain

-::-

مرشد ! ہمیں قبروں میں نہیں کتابوں میں اتارو

ہائے مرشد ! ہم محبت کے مارے ہوئے ہیں

——————

Raat Ki Tnhai Main Sgrt Jala Li Main Ny

Murshid!Kam Bhat Dhoyn Ny Us Ki Tasvir Bana Dali

-::-

رات کی تنہائی میں سگرٹ جلا لی میں نے

مرشد ! کم بھت دھویں نے اس کی تصویر بنا ڈالی

——————-

Kh Sahmi Hoi Hai Jhopri Barish Ky Khuf Sy

Murshid!Mhlon Ki Arzoo Hai Kh Barish Taiz Ho

-::-

کہ سہمی ہوئی ہے جحوپری بارش کے خوف سے

مرشد ! محلوں کی آرزو ہے کہ بارش تیز ہو

—————–

Murshid!Tere Lhje Main Aaj baat Krni Hai

Murshid!Mumkin Hai Aaj Ahtram Na Ho

-::-

مرشد ! تیرے لہجے میں آج بات کرنی ہے

مرشد ! ممکن ہے آج احترام نا ہو

——————-

Hamari Aankhain Jo Shayari Suna Ny Lag Jain

Murshid!Lfz Jo Tum Liye Phirty Ho Thakane Lag Jaain

-::-

ہماری آنکھیں جو شاعری سنا نے لگ جائیں

مرشد ! لفظ جو تم لیے پھرتی ہو ٹھکانے لگ جائیں

——————

Us Ki Tasvir Ko Bana Kr Phir

Murshid!Chekhay Maar Kr Hum Usay Mnate Hain

-::-

اس کی تصویر کو بنا کر پِھر

مرشد ! چیخای مار کر ہم اسے مناتے ہیں

———————

Murshid!Intzar Uus Ka Hai

Hye Murshid!Jise Mira Ahsas Tk Nhi

-::-

مرشد ! انتظار اُس کا ہے

ہائے مرشد ! جسے میرا احساس تک نہیں

——————

Aye Thy Muje Muhabbat Sikhane

Murshid!Daikh Kr Ishq Mera Murid Ho Gaye

-::-

آئے تھے مجھے محبت سکھانے

مرشد ! دیکھ کر عشق میرا مرید ہو گئے

————-

Sochty Hain Hasrtou Ky Moor Pr Sham o Sahr

Jaain Gy sagr Kaha Un Ki Gali Sy Roth Kr

-::-

سوچتے ہیں حسرتوو کے مور پر شام و سحر

جائیں گے ساگر کہا ان کی گلی سے روٹھ کر

——————–

Is Trha Dhaye Hain Us Ny Sitm Muj Pr

Zahm Sy Dil Hi Nhi Pura Bdan Bhr Gaya

-::-

اِس طرح ڈھائے ہیں اس نے سیتم مجھ پر

زہم سے دِل ہی نہیں پورا بدن بھر گیا

——————-

Baat Yh Nhi Kh Muhabbat Nhi Mili Muj Ko

Hadsa Yh Hai Kh Thukraya Gaya Muj Ko

-::-

بات یہ نہیں کہ محبت نہیں ملی مجھ کو

حادثہ یہ ہے کہ ٹھکرایا گیا مجھ کو

——————

Bay Waqt Bay Waja Bay Hisab Muskura Daita Ho

Adhay Dushmano Ko Tou yun Hi Hara Daita Ho

-::-

بے وقت بے وجہ بے حساب مسکرا دیتا ہو

آدھے دشمنوں کو تو یوں ہی ہارا دیتا ہو

————————

kh Thk Raha Hai Dil Mera

Murshid!Abb Aur Kitni Azmaish Baki Hai

-::-

کہ تھك رہا ہے دِل میرا

مرشد ! اب اور کتنی آزمائش باقی ہے

——————-

kh Mere Lafzon Ki Tareef Krty Ho

Murshid!Muj Sy Mera Gm Nhi Pocho Gy

-::-

کہ میرے لفظوں کی تعریف کرتے ہو

مرشد ! مجھ سے میرا غم نہیں پوچھو گے

———————-

Tere Liye Khwab Tha Aya Guzr Gaya

Murshid!A Daikh Meri zaat Kaisy Bikhr Gai Hai

-::-

تیرے لیے خواب تھا آیا گزر گیا

مرشد ! آ دیکھ میری ذات کیسے بکھر گئی ہے

———————–

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *