Ahmad Nadeem Qasmi Urdu Poetry Pictures – Urdu Shayari

Ahmad Nadeem Qasmi Urdu Poetry Picture

Kh Sari Dunya Kh Riwajon Sy Kinara Kr Ky

Murshid!Tumhain Yaad Hai Jb Main Ny Tum Sy Muhabbat Ki Thi

-::-

کہ ساری دنیا کہ رواجوں سے کنارہ کر کے

مرشد ! تمہیں یاد ہے جب میں نے تم سے محبت کی تھی

——————

Main Diwaron Pay Tumhara Aks Bana Kr

Murshid!Apni Mrzi K Tum Sy Jwab Sunta Ho

-::-

میں دیواروں پے تمہارا عکس بنا کر

مرشد ! اپنی مرضی کے تم سے جواب سنتا ہو

——————-

Aap Ajnbi Achay Ho

Murshid!Talukat Fraib Daity Hain

-::-

آپ اجنبی اچھے ہو

مرشد ! تعلقات فریب دیتے ہیں

—————–

Ankhain Hali Rakh Lain Gy Hum Sare Khuwab Jala Dalain Gy

Tere Naam Pah Nfrt Likh Kr Tera Naam Mita dalain Gy

-::-

آنکھیں حالی رکھ لیں گے ہم سارے خواب جلا ڈالیں گے

تیرے نام پاہ نفرت لکھ کر تیرا نام مٹا ڈالیں گے

—————–

Jo Tere Saath Rhtay Howe Udaas Ho

Lanat Ho Aisy Shaks Pr Aur Bay Shumar Ho

-::-

جو تیرے ساتھ رحتے ہوئے اداس ہو

لعنت ہو ایسے شخص پر اور بے شمار ہو

——————–

Kuch Anso Ankho Sy Yo Hi Nhi Bah Jate

Kuch Anso Gam Ki Mukamal Misal Hotay Hain

-::-

کچھ آنسو آنکھوں سے یو ہی نہیں بہہ جاتے

کچھ آنسو غم کی مکمل مثال ہوتے ہیں

——————

Main Ny Wakt Ki Bheer Main Kho Janay Walo Ko Dubara Miltay Nh Daikha Hai

Agr Wo Kbhi Amnay Samnay A Bhi Jaain Tou Wo Wahi Loog Nhi Hote

-::-

میں نے وقت کی بھیڑ میں کھو جانے والو کو دوبارہ ملتے نہی دیکھا ہے

اگر وہ کبھی آمنے سامنے آ بھی جائیں تو وہ وہی لوگ نہیں ہوتے

————————

Aaj Shayari Nhi Bs Itna Sun Lo

Main Tnha Ho Aur Waja Tum Ho

-::-

آج شاعری نہیں بس اتنا سن لو

میں تنہا ہو اور وجہ تم ہو

————-

Aur Kya Daikh Ny Ko Baki Hai

Aap Sy Dil Laga Kr Daikh Liya

-::-

اور کیا دیکھ نے کو باقی ہے

آپ سے دِل لگا کر دیکھ لیا

——————–

Kr Liya Tha Main Ny Trke Ishq

Tum Ny Phir Ba hain Galay Main Daal Li

-::-

کر لیا تھا میں نے ترکے عشق

تم نے پِھر با ہیں گلے میں ڈال لی

——————–

Kh Kaha Itne Msrof Ho Gy Ho

Murshid!Dil Dukhane Main Abb Nhi Atay

-::-

کہ کہا اتنے مصروف ہو گے ہو

مرشد ! دِل دکھانے میں اب نہیں آتے

———————

Bchhar Kr Muj Sy Tuje Jena Acha Lgta Hai

Ja Khush Rah Muje Tera Khush Rhna Acha Lgta Hai

-::-

بچھار کر مجھ سے تجھے جینا اچھا لگتا ہے

جا خوش راہ مجھے تیرا خوش رہنا اچھا لگتا ہے

————————-

Batain Un Ki aisi Kh Wafa Un Pah Khtm

Murshid!jb Nbhane Ki Baat Ai Tou Woh Mjbor nikly

-::-

باتیں ان کی ایسی کہ وفا ان پہ ختم

مرشد ! جب نبھانے کی بات آئی تو وہ مجبور نکلے

——————

Phir Kya Huwa Kh Kat Gai Tere Bgair Bhi

Murshid!Ujri Hoi Looti Hoi Wiran Zindagi

-::-

پِھر کیا ہُوا کہ کٹ گئی تیرے بغیر بھی

مرشد ! اجڑی ہوئی لوٹی ہوئی ویران زندگی

———————-

Kh Abb Jzbat Ko Smja Jai

Murshid!Dil Abb Wah Wah Sy Mutasir Nhi Hota

-::-

کہ اب جذبات کو سمجا جائے

مرشد ! دِل اب واہ واہ سے متاثر نہیں ہوتا

——————-

Hatta Un Ki Bhi Na Thi Woh Bhi Kya Krty

Un K Chahny Wale Itne Thy Kis Kis Sy Wafa Krty

-::-

حطا ان کی بھی نا تھی وہ بھی کیا کرتے

ان کے چاہنے والے اتنے تھے کس کس سے وفا کرتے

————————–

Kisi Din Betha kh Pochain Gy Teri Ankho Sy

Kis Ny Sikhaya Hy Inhain Har Dil Main Utrna

-::-

کسی دن بیٹھا کہ پوچھیں گے تیری آنکھوں سے

کس نے سکھایا ہے انہیں ہر دِل میں اترنا

————————–

Muj Sy Daman Na Chora Kh Muje Chupa Kh Rakh Lay

Murshid!Kh muj Sy Ik Roz Tuje Pyar Bhi Ho Skta Hai

-::-

مجھ سے دامن نا چھوڑا کہ مجھے چھپا کہ رکھ لے

مرشد ! کہ مجھ سے اک روز تجھے پیار بھی ہو سکتا ہے

———————–

Murshid!Isay Khna Tumhara Naam Kisi Aur Ky Lab Pah Tha

Murshid!Baat Zra Si Thi Lakin Dil Pah Lag Gai

-::-

مرشد ! اسے کہنا تمہارا نام کسی اور کے لب پہ تھا

مرشد ! بات زرا سی تھی لیکن دِل پہ لگ گئی

——————-

Ishq Agr Khaak Na Kr Dy

Murshid!Tou Khaak Ishq Howa

-::-

عشق اگر خاک نا کر دے

مرشد ! تو خاک عشق ہوا

———————-

Kh Murshid!Rotha Hai Tum Sy Tou Sinay Sy Kiu Nhi Laga Lytay

Hye Murshid!Diwana Hai Tumhara Koi Gair Thori Hai

-::-

کہ مرشد ! روٹھا ہے تم سے تو سینے سے کیوں نہیں لگا لیتے

ہائے مرشد ! دیوانہ ہے تمہارا کوئی غیر تھوڑی ہے

——————-

Murshid!Woh Jo Khta Tha Kuch Nhi Hota

Hye Murshid!Abb Woh Rota Hai Aur Chup Nhi Hota

-::-

مرشد ! وہ جو کہتا تھا کچھ نہیں ہوتا

ہائے مرشد ! اب وہ روتا ہے اور چُپ نہیں ہوتا

——————-

Tere Liye Khuwab Tha Aya Guzr Gaya

Murshid!A Daikh Mere Zaat Kase Bikhr Gai Hai

-::-

تیرے لیے خواب تھا آیا گزر گیا

مرشد ! آ دیکھ میرے ذات کیسے بکھر گئی ہے

————–

Murshid!Mukmal Ujr Gy Hum

Hye Murshid!Kya Isi Kabil Thy Hum

-::-

مرشد ! مکمل اجڑ گے ہم

ہائے مرشد ! کیا اسی قابل تھے ہم

—————

Murshid!Woh Muj Pr Hnsta Hai Yun

Murshid!jesy Mkafat e Amal Mzak Ho

-::-

مرشد ! وہ مجھ پر ہنستا ہے یوں

مرشد ! جیسے مکافات عمل مذاق ہو

—————–

Murshid!Teri Judai Aur July

Hye Murshid!Dono Mil Kr Maar Rahe Hain

-::-

مرشد ! تیری جدائی اور جولائی

ہائے مرشد ! دونوں مل کر مار رہے ہیں

——————–

Woh Jou Kahty Thay Tumhain Hum Achy Sy Janty Hain

Murshid!Unhain Abb Hmari Tklif Bhi Dikhai Nhi daiti

-::-

وہ جو کہتے تھے تمہیں ہم اچھے سے جانتے ہیں

مرشد ! انہیں اب ہماری تکلیف بھی دکھائی نہیں دیتی

—————-

Waqt Ny Hera Phairi Kr Di Hmarey Saath

Murshid!Warna Muhabbat Tou Dono Ki Suchi Thi

-::-

وقت نے ہیرا پھیری کر دی ہمارے ساتھ

مرشد ! ورنہ محبت تو دونوں کی سچی تھی

—————-

Main Ny Un Sy Bola Tumhare Baad Hmara Kya Hoga

Woh Hns Kr Bole La Waris aksr Mar Jaya Krty Hain

-::-

میں نے ان سے بولا تمھارے بعد ہمارا کیا ہو گا

وہ ہنس کر بولے لا وارث اکثر مر جایا کرتے ہیں

————————-

Tuj Pay Shayari Krty Bhi Tou Kya Likhty

Murshid!Tuje Yr Likhty Fnkar Likhty Ya Yaar Likhty

-::-

تجھ پے شاعری کرتے بھی تو کیا لکھتے

مرشد ! تجھے یار لکھتے فنكار لکھتے یا یار لکھتے

——————–

2 thoughts on “Ahmad Nadeem Qasmi Urdu Poetry Pictures – Urdu Shayari

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *