Poetry about Life in Urdu 2 Line – Urdu Shayari

Poetry about Life in Urdu 2 Line

Murshid!Muje Pyar Sy Apni Zindagi Khta Hai

Hye Murshid!Usy Muje Pr Atbar Nhi

-::-

مرشد ! مجھے پیار سے اپنی زندگی کہتا ہے

ہائے مرشد ! اسے مجھے پر اعتبار نہیں

——————

Kh Chun Liya Nfrat Ko Muhabbat Kh Bdlay

Murshid!Ab Nhi Glay Koi Kuch Bhi Kahay

-::-

کہ چن لیا نفرت کو محبت کہ بدلے

مرشد ! اب نہیں گلے کوئی کچھ بھی کہے

——————

Kh Us Ky Baad Kuch Bhi Na Khoya Main Ny

Murshid!Wo Meri Zindagi ka Akhri Hsara Tha

-::-

کہ اس کے بعد کچھ بھی نا کھویا میں نے

مرشد ! وہ میری زندگی کا آخری حسارا تھا

——————

Kh Kya Kaha Ro Rhe Ho

Hye Murshid!Kaha tha Na Mkafat e amal Ho Ga

-::-

کہ کیا کہا رو رہے ہو

ہائے مرشد ! کہا تھا نا مکافات عمل ہو گا

——————–

Kh Muje Kiun Aziz Tar Hai Yh Dho wa Dho wa Sa Mosam

Murshid!Yh Sham Hawain Hijr Muje Raas Hai tou Kiun hai

-::-

کہ مجھے کیوں عزیز تر ہے یہ دھو وا دھو وا سا موسم

مرشد ! یہ شام ہوائیں ہجر مجھے راس ہے تو کیوں ہے

————–

Kh Maamlh Hmare Hayat ka Tha

Murshid!Wo Nfa Nuksan Daikhty Rhe

-::-

کہ معاملہ ہماری حیات کا تھا

مرشد ! وہ نفا نقصان دیکھتے رہے

————————-

Kh Hr Haal Main Hansnay Ka Hnr paas Tha Jin ky

Murshid!Wo Rone Lagi hai Koi Baat Tou ho Gi

-::-

کہ ہر حال میں ہنسنے کا ہنر پاس تھا جن کے

مرشد ! وہ رونے لگی ہے کوئی بات تو ہو گی

———————-

Kh Kya kaho Zindagi K Barey Main

Murshid!Aik Tamasha Tha Umar Bhar daikha

-::-

کہ کیا کہو زندگی کے بارے میں

مرشد ! ایک تماشہ تھا عمر بھر دیکھا

———————-

Ary Nhi Murshid Bht Khush Ho Main

App Bs Ankho Peh Dhyan Nah Digiyiay

-::-

ارے نہیں مرشد بہت خوش ہو میں

آپ بس آنکھوں پہ دھیان نہ دیجیے

——————-

Kh Muskurany K Zamany Guzr gy Murshid

waqt Dfna gaya Mere Zoq Bhi Mere Shok Bhi

-::-

کہ مسکرانے کے زمانے گزر گے مرشد

وقت دفنا گیا میرے زوق بھی میرے شوق بھی

——————–

Ae Qaasd un Sy Khna Tumhare Yaad Ati Hai

Murshid!Yh Bhi Khna Hm Ro Prtay Hain

-::-

اے قاسد ان سے کہنا تمھارے یاد آتی ہے

مرشد ! یہ بھی کہنا ہم رو پرتے ہیں

——————-

Kh Muhabbat Bhi Iman Ki Trha Hoti Hai

Murshid!Mhbob wahid Nah Ho Tou Kufr ho Jata Hai

-::-

کہ محبت بھی ایمان کی طرح ہوتی ہے

مرشد ! محبوب واحد نہ ہو تو کفر ہو جاتا ہے

———————–

Kh Hiyal e yaar Main Jo Lamha Guzr Jae

Murshid!Wo Abadt Hai Abadt Hai Abadt Hai

-::-

کہ حیال یار میں جو لمحہ گزر جائے

مرشد ! وہ عبادت ہے عبادت ہے عبادت ہے

——————

Main Ny Kuch Lafz likhay Hain lhro Pr

Murshid!Jb Drya Tere Shehr sy guzry tou Prhh Lay Nah

-::-

میں نے کچھ لفظ لکھے ہیں لحرو پر

مرشد ! جب دریا تیرے شہر سے گزرے تو پڑھ لے نہ

——————-

Wo Taluk Jo Boht Aham Tha

Murshid!Ab Lgta Hai Bs Wahm Tha

-::-

وہ تعلق جو بہت اہم تھا

مرشد ! اب لگتا ہے بس وہم تھا

——————

Kh Sochta Ho Kbhi Kbhi

Murshid!Harj Hi Kya Tha Usay Manany main

-::-

کہ سوچتا ہو کبھی کبھی

مرشد ! ہرج ہی کیا تھا اسے منانے میں

——————

Kh Meri Zaat Sy Wabsta Aik Shaks

Murshid!Mery Paas Tou Raha Pr Mera Nhi raha

-::-

کہ میری ذات سے وابستہ ایک شخص

مرشد ! میرے پاس تو رہا پر میرا نہیں رہا

———————–

Kh Wapis Lay Aya Dakiya Chitthi Meri

Murshid!Wo Khta Pata Tou Sahi hy Magr Pahchan Ny Sy InKar Kr Diya

-::-

کہ واپس لے آیا ڈاکیا چٹھی میری

مرشد ! وہ کہتا پتہ تو سہی ہے مگر پہچان نے سے انکار کر دیا

—————————

Kh Jlado Aag Muhabbat Ki Mere Sinay Main

Murshid!Hyal Jo Kisi Gair Ka Aye You Haak Ho Jao Main

-::-

کہ جلادو آگ محبت کی میرے سینے میں

مرشد ! حیال جو کسی غیر کا آئے یو ہاک ہو جاؤ میں

——————

Murshid!Loog Mugh Sy Puchtay Hain tum Kuch Bdl Sy Gy Ho

Hye Murshid! Abb Batao Totay Howy Ptay rang Bhi Nah Bdlay kya

-::-

مرشد ! لوگ مجھ سے پوچتے ہیں تم کچھ بدل سے گے ہو

ہائے مرشد ! اب بتاؤ ٹوٹے ہوئے پتے رنگ بھی نہ بدلے کیا

—————–

Ishq Viran Krny Aya Tha

Murshid! Hum Ny Heran Kr Kay Bh aija Hy

-::-

عشق ویران کرنے آیا تھا

مرشد ! ہم نے حیران کر کے بھ ایجا ہے

——————

Kh Itni Syah Raat Main Kis Ko Sadain Doun

Murshid!Koi Aisa Chrag Dou Jo Bolta bhi Ho

-::-

کہ اتنی سیاح رات میں کس کو صدائیں دوں

مرشد ! کوئی ایسا چراغ دو جو بولتا بھی ہو

—————-

Hirt Kro Mallal Kro Ya Gila Kro

Tum Gair Lag Rahe Ho Murshid Main Kya Kro

-::-

حیرت کرو ملال کرو یا گلہ کرو

تم غیر لگ رہے ہو مرشد میں کیا کرو

————–

Kh Murshid Abb Barhao Surt e Naaz Koi

Hye Murshid!Iss Ky Yr Ki Yaad Zehr Ka Kaam Kr Rhi Hai

-::-

کہ مرشد اب بڑھاؤ سورت ناز کوئی

ہائے مرشد ! اِس کے یار کی یاد زہر کا کام کر رہی ہے

———————–

Kh Pth ro Tumhari Aukat Hi Kya

Hye Murshid!Mere Yaar Ka Dil Uf Toba

-::-

کہ پتھ رو تمہاری اوقات ہی کیا

ہائے مرشد ! میرے یار کا دِل اف توبہ

—————-

Kh Muhabbat Sy Mara Gaya Hr Baar

Murshid!Wo Ma Ki Ladli Wakif Thi Mere Tarbiyat Sy

-::-

کہ محبت سے مارا گیا ہر بار

مرشد ! وہ ماں کی لاڈلی واقف تھی میرے تربیت سے

——————

Kh Murshid!Hmain Tou Hamari Thzeb Ny Khush Rakha

Hye Murshid!Warna Dard Likhty Aur wafa Hoti

-::-

کہ مرشد ! ہمیں تو ہماری تھزیب نے خوش رکھا

ہائے مرشد ! ورنہ درد لکھتے اور وفا ہوتی

———————–

Kh Tere Shehr K Sab hi Loog Jantay Hain Muje

Murshid!Main ehad Ka Sb Sy Zahid Bacha Ho

-::-

کہ تیرے شہر کے سب ہی لوگ جانتے ہیں مجھے

مرشد ! میں عہد کا سب سے زاہد بچہ ہو

—————-

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *